> <

مسعود پرویز کی وفات

مسعود پرویز کی وفات ٭10 مارچ 2001ء کو پاکستان کے مشہور فلمی ہدایت کار مسعود پرویز لاہور میں وفات پاگئے۔ مسعود پرویز 1918ء میں امرتسر میں پیدا ہوئے تھے۔ ان کا تعلق ایک علمی اور ادبی گھرانے سے تھا اور اردو کے نامور ادیب سعادت حسن منٹو ان کے قریبی عزیز تھے۔ مسعود پرویز نے قیام پاکستان سے قبل فلم منگنی میں ممتاز شانتی کے مقابل ہیرو کی حیثیت سے اپنے فلمی کیریئر کا آغاز کیا۔ اس کے بعد انہوں نے ڈبلیو زیڈ احمد کی دو فلموں غلامی اور میرا بائی میں بھی اداکاری کے جوہر دکھائے۔ قیام پاکستان کے بعد انہوں نے ہدایت کاری کا شعبہ اختیار کیا۔ ان کی یادگار فلموں میں بیلی، انتظار، زہر عشق، کوئل، مرزا جٹ، ہیر رانجھا، منزل، سکھ کا سپنا، جھومر، سرحد، مراد بلوچ، نجمہ، حیدر علی اور خاک و خون کے نام سرفہرست ہیں۔ مسعود پرویز کو 1957ء میں فلم انتظار پر بہترین ہدایت کار کا صدارتی ایوارڈ عطا ہوا تھا۔اس فلم نے مجموعی طور پر 6 صدارتی ایوارڈ حاصل کئے تھے۔ مسعود پرویز  نے فلم ہیر رانجھا اور خاک و خون میں بہترین ہدایت کار کے نگار ایوارڈ حاصل کئے تھے جبکہ ان کی فلموں کو متعدد شعبوں میں نگار ایوارڈز عطا کئے گئے تھے۔ مسعود پرویز لاہور میں ڈیفنس سوسائٹی کے قبرستان میں آسودۂ خاک ہیں۔  

UP