> <

صدارتی تمغہ برائے حسن کارکردگی۔ عارف لوہار

عارف لوہار پاکستان کے معروف اور مقبول لوک فنکار عارف لوہار  1966ء کو لالہ موسیٰ کے ایک گائوں اچھ میں پیدا ہوئے۔ عارف نے بہت کم عمری میں اپنے والد عالم لوہار اور بڑے بھائی کے ساتھ گانا شروع کر دیا تھا۔ 22 سال کی عمر میں عارف نے موسیقی کیریئر کے آغاز ہی میں فلموں میں اداکاری بھی شروع کر دی۔ انہوں نے کئی پنجابی فلموں میں مرکزی کردار ادا کیا۔ ان کی فلم ’’زندگی‘‘ بہت مقبول ہوئی جس میں انہوں نے عطاء اللہ خان عیسیٰ خیلوی کے ساتھ مل کر ایک یادگار کردار ادا کیا اور اس فلم میں عارف لوہار کے گائے ہوئے گانے بھی بے حد مقبول ہوئے۔ 2012ء میں سید نور کی فلم ’’جگنی‘‘ کے لیے 3 گانے گائے اور تیارکیے۔ عارف لوہار گزشتہ0 2 سالوں کے دوران 50 غیر ملکی دوروں پر جا چکے ہیں۔انہوں نے چین میں ایشین گیمز کی افتتاحی تقریب  کے دوران اپنی کارکردگی کا مظاہرہ کیا، اس وقت وہاں دس لاکھ کا ہجوم تھا۔ عارف لوہار نے ایک بار امن اورخیر سگالی کے لیے جنوبی کوریا میں بھی اپنی کارکردگی دکھائی۔ اب تک ان کے 150 سے زائد البمز اور 3,000 کے قریب گانے ریکارڈ ہو چکے ہیں، جن میں زیادہ تر پنجابی گیت ہیں۔ 2006ء میں ان کا البم ’’ جگنی ‘‘ ریلیز ہوا، جسے شائقین نے بہت پسند کیا۔ عارف لوہار کے مقبول ترین گانوں میں ’’الف اللہ، اک پل، بول مٹی دیا باویا ، شیر پنجاب دا، سوہنیے، اکھیاں، بھاگ مکا بھاگ، پنجاب بولدا‘‘ شامل ہیں۔ 14 اگست 2004ء کو حکومت پاکستان انھیں صدارتی تمغہ برائے حسن کارکردگی عطا کیا تھا۔

UP