> <

صدارتی تمغہ برائے حسن کارکردگی۔ راغب مراد آبادی

راغب مراد آبادی اردو کے معروف شاعر راغب مراد آبادی کا اصل نام سید اصغر حسین تھا اور وہ 27 مارچ 1918ء کو دہلی میں پیدا ہوئے تھے۔ ان کا آبائی وطن مراد آباد تھا اس لیے انہوں نے اپنے نام کے ساتھ دہلوی کی بجائے مراد آبادی لکھنے کو ترجیح دی۔ راغب مراد آبادی نے دہلی اور لاہور سے تعلیم حاصل کی اور گریجویشن کرنے کے ساتھ ساتھ طبیہ کالج، دہلی سے طب کی سند بھی حاصل کی۔ 1939ء میں جنرل ہیڈ کوارٹرز دہلی سے ملازمت کا آغاز کیا۔ قیام پاکستان کے بعد انہوں نے کراچی میں اقامت اختیار کی اور لیبر ڈپارٹمنٹ میں ملازم ہوگئے جہاں سے وہ 1980ء میں بطور افسر تعلقات عامہ ریٹائر ہوئے۔ راغب مراد آبادی بڑے قادرالکلام شاعر تھے۔ غزل، نظم، رباعی، مرثیہ اور ہائیکو، انہوں نے ہر صنف سخن میں اپنے کلام کے جوہر دکھائے۔ ان کی تیس سے زیادہ کتابیں اشاعت پذیر ہوئیں جن میں عزم و ایثار، ساغر صد رنگ، نذر شہدائے کربلا، ہمارا کشمیر، مدح رسول، رگ گفتار ، ترغیب، تحریک، محنت کی ریت، ضیائے سخن، بدر الدجیٰ، جادہ رحمت اور مدح خیر البشر کے نام سرفہرست ہیں۔ وہ اردو کے علاوہ پنجابی زبان میں بھی شاعری کرتے تھے اور ان کے پنجابی کلام کا مجموعہ ’’تاریاں دی لو‘‘ کے نام سے اشاعت پذیر ہوا تھا۔ راغب مراد آبادی 19 جنوری 2011ء کو کراچی میں وفات پاگئے۔ وہ النور سوسائٹی کے قبرستان میں آسودہ خاک ہیں۔

UP