> <

صدارتی تمغہ برائے حسن کارکردگی۔ ظہیر کاشمیری

 ظہیر کاشمیری اردو کے ممتاز شاعر اور ادیب ظہیر کاشمیری کا اصل نام غلام دستگیر تھا اور وہ 21 اگست 1919ء کو امرتسر میں پیدا ہوئے تھے۔ وہ ادب کی ترقی پسند تحریک سے وابستہ تھے۔ ان کے شعری مجموعوں میں آدمی نامہ، جہان آگہی، چراغ آخر شب اور حرف سپاس کے نام شامل ہیں۔ حکومت پاکستان نے انہیں ان کی وفات کے بعد 14 اگست1995ء کو صدارتی تمغہ برائے حسن کارکردگی عطا کیا تھا۔ ظہیر کاشمیری 12 دسمبر 1994ء کو لاہور میں وفات پاگئے اور میانی صاحب کے قبرستان میں آسودہ خاک ہوئے۔ ان کا ایک شعر ملاحظہ ہو: ہمیں خبر ہے کہ ہم ہیں چراغ آخر شب ہمارے بعد اندھیرا نہیں، اْجالا ہے

UP