> <

صدارتی تمغہ برائے حسن کارکردگی۔ قاضی محب الر حمٰن

قاضی محب الر حمٰن ہاکی کے معروف کھلاڑی قاضی محب الرحمن 15 اگست 1963ء کو سکاری ضلع بنوں میں پیدا ہوئے تھے۔فروری 1986ء میں وہ پاکستانی کی قومی ٹیم میں شامل ہوئے۔ انہوں نے 17 ٹورنامنٹس کے 123 میچز میں پاکستان کی نمائندگی کی اور اس دوران چار طلائی، آٹھ نقرئی اور تین کانسی کے میڈل جیتے۔ وہ پنالٹی کارنر سے گول اسکور کرنے کے ماہر سمجھے جاتے تھے۔ انہوں نے مجموعی طور پر41گول اسکور کئے۔ قاضی محب بنیادی طور پر فل بیک پوزیشن پر کھیلتے تھے مگر چند عرصے انہوں نے رائٹ ہاف کی پوزیشن پر کھیلا۔ وہ 1988ء سے 1990ء تک پاکستانی ہاکی ٹیم کے کپتان رہے۔ اس دوران انہوں نے چیمپئنز ٹرافی میں مین آف دی ٹورنامنٹ کی ٹرافی اور پاک بھارت ٹیسٹ سیریز میں بیسٹ پلیئر آف دی سیریز کا اعزاز حاصل کیا۔ 1990ء کے ایشیائی کھیلوں کے دوران ٹانگ میں گیند لگنے کی وجہ سے ان کے پاؤں میں ایک زخم ہوگیا جو آہستہ آہستہ کینسر بن گیا۔ اسی مرض میں وہ صرف 33 برس کی عمر میں 29 دسمبر 1996ء کو دنیا سے رخصت ہوگئے اور اپنے آبائی گاؤں سکاری ضلع بنوں میں آسودہ خاک ہوئے۔ حکومت پاکستان نے انہیں 14 اگست 1993ء کو صدارتی تمغہ برائے حسن کارکردگی عطا کیا تھا۔

UP