> <

صدارتی تمغہ برائے حسن کارکردگی۔ جمیل الدین عالی

 جمیل الدین عالی اردو کے معروف شاعر، ادیب، کالم نگار اور منتظم، مرزا جمیل الدین احمد خان20 جنوری 1925ء کودہلی میں پیدا ہوئے۔ اینگلو عربک کالج دہلی سے گریجویشن کیا۔ قیام پاکستان کے بعد کراچی میں اقامت اختیار کی اور سرکاری ملازمت سے وابستہ ہوئے۔ 1959ء میں پاکستان رائٹرز گلڈ کے قیام میں فعال حصہ لیا اور اس کے سیکریٹری مقرر ہوئے۔ 1961ء میں بابائے اردو مولوی عبدالحق کی وفات کے بعد انجمن ترقی اردو کے سیکریٹری مقرر ہوئے۔ شعری مجموعوں میں غزلیں، دوہے، گیت، لاحاصل، جیوے پاکستان، انسان اور اے میرے دشت سخن شامل ہیں۔ سفرنامے دنیا میرے آگے اور تماشا میرے آگے کے نام سے شائع ہوچکے ہیں۔ کالموں کے دو مجموعے صدا کر چلے اور دعا کر چلے بھی اشاعت پذیر ہوئے ۔ حکومت پاکستان نے  14اگست 1991ء کو  صدارتی تمغہ برائے حسن کارکردگی  اور بعد ازاں ستارہ امتیاز اور ہلال امتیازکے اعزازات اور جامعہ کراچی نے ڈاکٹریٹ کی اعزازی سند عطا کی ہے۔متحدہ قومی موومنٹ کی نامزدگی پر سینیٹ آف پاکستان کے رکن بھی رہ چکے ہیں۔ کراچی میں قیام پذیر ہیں۔

UP