> <

صدارتی تمغہ برائے حسن کارکردگی۔ عطا الحق قاسمی

عطا الحق قاسمی شاعر ، ادیب اور صحافی عطا الحق قاسمی یکم فروری1943ء کو امرتسر میں پیدا ہوئے، نامور عالم دین اور تحریک پاکستان کے رہنما مولانا بہاء الحق قاسمی کے فرزندہیں۔ تدریس کے شعبے سے کیریئر کا آغاز کیا، ساتھ ہی ساتھ صحافت سے بھی وابستہ رہے اور ’’روزن دیوار سے‘‘ کے عنوان سے کالم نگاری کا آغاز کیاجس کا سلسلہ اب تک جاری ہے۔ تصانیف میں روزنِ دیوار سے ، عطایئے، خند مکرر، شوقِ آوارگی، گوروں کے دیس میں، سرگوشیاں، حبس معمول، جرمِ ظریفی، دھول دھپا، آپ بھی شرمسار ہو، دلّی دور است، کالم تمام، بازیچۂ اعمال، بارہ سنگھے، ملاقاتیں ادھوری ہیں، دنیا خوب صورت ہے، مزید گنجے فرشتے، شرگوشیاں، ہنسنا رونا منع ہے، اپنے پرائے، علی بابا چالیس چور اور ایک غیر ملکی کا سفرنامۂ لاہور کے نام سرفہرست ہیں۔ پاکستان ٹیلی وژن کے لیے کئی معروف ڈرامہ سیریل تحریر کیے جن میں خواجہ اینڈ سن، شب دیگ، حویلی اور شیدا ٹلی کے نام قابل ذکر ہیں۔ ناروے اور تھائی لینڈ میں پاکستان کے سفیر کے طور پر خدمات انجام دے چکے ہیں۔ حکومت پاکستان نے14اگست 1991ء کو صدارتی تمغہ برائے حسن کارکردگی اور بعد ازاںستارۂ امتیاز اور ہلال امتیازعطا کیا۔ آدم جی ادبی انعام اور اے پی این ایس ایوارڈ بھی حاصل کرچکے ہیں۔ آج کل الحمرا آرٹس کونسل لاہور کے بورڈ آف گورنرز کے چیئرمین ہیں۔

UP