> <

صدارتی تمغہ برائے حسن کارکردگی۔ عمران خان

عمران خان پاکستان کے مشہور کرکٹر ، سماجی کارکن اور سیاست دان عمران خان 25 نومبر 1952ء کو پیدا ہوئے۔ ان کے ٹیسٹ کیریئر کا آغاز1971ء برطانیہ کے خلاف کھیلی جانے والی ٹیسٹ سیریز سے ہوا تھا، تاہم انہیں خود کو منوانے میں مزید 6 سال لگے۔ جنوری 1977ء میں سڈنی ٹیسٹ میں ان کی بہترین بائولنگ کی بدولت پاکستان نے آسٹریلیا کے خلاف 8 وکٹوں سے شاندار کامیابی حاصل کی جس کے بعد عمران خان نے پیچھے پلٹ کر نہیں دیکھا۔ عمران خان پاکستان کے پہلے کھلاڑی تھے جنہوں نے ٹیسٹ کرکٹ میں 300 وکٹوں کا ہدف عبور کیا تھا۔ انہوں نے مجموعی طور پر 88 ٹیسٹ میچ کھیلے اور 362 وکٹیں حاصل کیں۔ ایک روزہ میچوں میں بھی ان کی کارکردگی نہایت شاندار رہی اور انہوں نے 175 ایک روزہ میچوں میں 123 وکٹیں لینے کا سنگ میل عبور کیا۔ عمران خان نے 48 ٹیسٹ میچوں میں پاکستانی کرکٹ ٹیم کی قیادت کی جس میں 14 ٹیسٹ میچوں میں انہیں کامیابی حاصل ہوئی، 8 ٹیسٹ میچوں میں شکست کا سامنا کرنا پڑا جبکہ 26 ٹیسٹ میچ ہار جیت کے فیصلے کے بغیر ختم ہوئے۔ عمران خان کی قیادت میں ہی پاکستان نے 1992ء  کا ورلڈ کپ کرکٹ ٹورنامنٹ جیتا۔ اس کے بعد وہ کرکٹ سے ریٹائر ہوگئے۔ کرکٹ سے ریٹائرمنٹ کے بعد عمران خان نے اپنی والدہ کی یاد میں لاہور میں شوکت خانم میموریل کینسر اسپتال قائم کیا جو اس وقت ملک کا سب سے بڑا کینسر اسپتال ہے۔14 اگست 1983ء کو حکومت پاکستان نے انھیں صدارتی تمغہ برائے حسن کارکردگی عطا کیا ۔ عمران خان کی مقبولیت کے باعث ان کے مداحین نے انہیں سیاست کے میدان میں بھی قدم رکھنے پر آمادہ کیا۔                                                                                                                                          1996 ء میں عمران خان نے اپنی سیاسی جماعت تحریک انصاف پاکستان کے نام سے قائم کی، ابتدا میں ان کی اصولی سیاست کی وجہ سے ان کی سیاسی جماعت ملکی سیاست میں کوئی قابل ذکر کامیابی حاصل نہ کرسکی تاہم 2002ء کے عام انتخابات میں عمران خان پہلی مرتبہ قومی اسمبلی کے رکن ہوئے۔ 2008ء کے عام انتخابات میں انہوں نے حصہ نہیں لیا لیکن 2013 ء کے عام انتخابات میں نہ صرف وہ خود قومی اسمبلی کے رکن منتخب ہوئے بلکہ ان کی سیاسی جماعت تحریک انصاف بھی ملک کی تیسری بڑی سیاسی جماعت کے طور پر ابھری ہے۔

UP