> <

صدارتی تمغہ برائے حسن کارکردگی۔ استاد امید علی خان

  استاد امید علی خان پاکستان کے ممتاز کلاسیکی موسیقار اور گائیک استاد امید علی خان 1914ء میں امرتسر میں جنڈیالہ گرو نامی گائوں میں پیدا ہوئے تھے۔ان کا تعلق موسیقی کے مشہور گوالیار گھرانے سے تھا۔ اس گھرانے کا میاں تان سین سے براہ راست نسبی تعلق ہے۔ امید علی خان کے والد استاد پیارے خان اور دادا استاد میران بخش اپنے زمانے کے مشہور گائیک تھے۔ استاد امید علی خان نے موسیقی کی ابتدائی تعلیم اپنے والد سے حاصل کی پھر پٹیالہ گھرانے کے استاد عاشق علی خان کے شاگرد ہوگئے۔ یہی سبب تھا کہ استاد امید علی خان کی گائیکی میں گوالیار اور پٹیالہ دونوں گھرانوں کی امتیازی خصوصیات جمع ہوگئی تھیں۔ استاد امید علی خان کے والد استاد پیارے خان ریاست خیرپور سے وابستہ ہوگئے تھے۔ استاد امید علی خان نے بھی اپنی زندگی کا ایک بڑا حصہ سندھ میں بسر کیا۔ ان کے شاگردوں میں استاد منظور حسین، فتح علی خاں اور حمید علی خان کے نام بہت نمایاں ہیں۔ استاد امید علی خان کا انتقال 14 جنوری 1979ء کو لاہور میں ہوا اور وہ وہیں آسودہ خاک ہیں۔ حکومت پاکستان نے انھیں 14 اگست 1969ء کو صدارتی تمغہ برائے حسن کارکردگی عطا کیا تھا۔  

UP