صدارتی تمغہ برائے حسن کارکردگی۔ استاد نزاکت علی خان ، استاد سلامت علی خان

استاد نزاکت علی خان ، استاد سلامت علی خان استاد نزاکت علی خان 1932ء میں استاد سلامت علی خان 12 دسمبر 1934ء کومشرقی پنجاب میںضلع ہوشیار پور میں شام چوراسی نامی قصبہ میں پیدا ہوئے جو اپنے موسیقی کے گھرانے کی وجہ سے پورے ہندوستان میں مشہور ہے، ان کا سلسلہ نسب استاد چاند خان، سورج خان سے ملتا ہے جو دربار اکبری کے نامور گائیک اور میاں تان سین کے ہم عصر تھے۔ استاد نزاکت علی خان اور استاد سلامت علی خان کے والد استاد ولائت علی خان بھی اپنے زمانے کے نامور موسیقار تھے اور دھرپد گائیکی میں اختصاص رکھتے تھے۔ استاد نزاکت علی خان اور استاد سلامت علی خان نے اپنے والد ولایت علی خان سے اکٹھے تعلیم حاصل کی اور نہایت کم عمری میں اپنی گائیکی کی وجہ سے ہندوستان بھرمیں مشہور ہوگئے۔انھوں نے اپنے ایک بزرگ میاں کریم بخش مجذوب سے خیال گائیکی بھی سیکھی۔قیام پاکستان کے بعد انہوں نے پہلے ملتان اور پھر لاہور میں اقامت اختیار کی اور پاکستان کے معروف موسیقاروں اور گائیکوں میں شمار ہونے لگے۔ استاد نزاکت علی خان اور استاد سلامت علی خان کو حکومت پاکستان نے 23 مارچ 1961 ء کو صدارتی تمغہ برائے حسن کارکردگی عطا کیا تھا بعد ازاں انھیں ستارہ امتیاز سے بھی سرفراز کیا گیا۔ استاد نزاکت علی خان نے 13 جولائی 1983ء کو راولپنڈی میں اور استاد سلامت علی خان نے 11 جولائی 2001ء کو لاہور میں وفات پائی۔      

UP